خوشاب ضمنی انتخابات میں پولنگ کا اختتام ہوا


خوشاب ضمنی انتخابات میں پولنگ کا اختتام ہوا

یہ نشست مسلم لیگ ن کے قانون ساز ممبر محمد وارث کلو کی موت کی وجہ سے خالی ہوگئی




The seat fell vacant due to the death of PML-N lawmaker Mohammad Waris Kallo
خوشاب ضمنی انتخابات میں پولنگ کا اختتام ہوا

خوشاب: 

 پنجاب اسمبلی کے حلقہ پی پی 84  میں ضمنی انتخابات کے لئے پولنگ بدھ کی شام اختتام پذیر ہوئی۔ 


یہ نشست مسلم لیگ ن کے قانون ساز محمد وارث کلو کی موت کی وجہ سے خالی ہوگئی ، جو 2018 میں 66،775 ووٹ لے کر انتخابات میں کامیاب ہوئے تھے۔


الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے مطابق اس حلقے میں کل رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد 292،687 ہے۔

کل پولنگ اسٹیشن

یہاں 155،104 مرد اور 137،583 خواتین ووٹر ہیں۔ اس حلقے میں کل 229 پولنگ اسٹیشن قائم کیے گئے ہیں (27 مرد ، 26 خواتین اور 176 مشترکہ)۔


تقریبا 43 43 پولنگ اسٹیشنوں کو حساس قرار دیا گیا تھا جبکہ سیکیورٹی خدشات کے پیش نظر اور تقریبا 142 پولنگ اسٹیشنوں کو انتہائی حساس قرار دیا گیا ہے۔


پولنگ ڈے کے لئے 2،800 سے زیادہ پولیس اور 500 رینجرز اہلکار حلقے میں تعینات تھے۔


علاوہ ازیں ، پنجاب الیکشن کمشنر غلام اسرار خان نے صورتحال کی نگرانی کے لئے 10 مانیٹرنگ ٹیمیں تشکیل دیں جبکہ تمام حساس پولنگ اسٹیشنوں پر سی سی ٹی وی کیمرے بھی لگائے گئے ہیں۔


 انتخابی اصلاحات کی ضرورت


صوبائی الیکشن کمشنر نے عوام سے اپیل کی کہ وہ بلا خوف و خطر پولنگ اسٹیشنوں پر آئیں۔


قبل ازیں یہ اطلاع ملی تھی کہ ضمنی انتخابات کے لئے 16 کاغذات نامزدگی موصول ہوئے تھے ، جن میں سے ایک کو مسترد کردیا گیا تھا ، جبکہ چھ امیدواروں نے کاغذات نامزدگی واپس لے لئے تھے۔


امیدواروں میں پاکستان تحریک انصاف سے علی حسین خان ، پاکستان مسلم لیگ (ن) سے محمد معظم شیر ، پاکستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینز سے غلام حبیب احمد ، امجد رضا ، اورنگزیب ، عمران حیدر خان اور محمد الیاس خان آزاد امیدوار اور حافظ شامل ہیں حال ہی میں کالعدم ٹی ایل پی سے محمد اصغر علی۔

خورشید عالم کو ریٹرننگ آفیسر مقرر

خورشید عالم کو ضلعی ریٹرننگ آفیسر اور شکیل احمد کو ریٹرننگ آفیسر مقرر کیا گیا ہے۔ حلقہ خوشاب ضلع کی تین تحصیلوں ، نور پور تھل ، قائد آباد اور خوشاب پر محیط ہے۔


اس کے علاوہ ضلعی انتظامیہ کا ایک فوکل پرسن ہر اسٹیشن کا پولنگ ریکارڈ ساتھ ریٹرننگ آفیسر کے دفتر بھی جائے گا۔


انتخابی عمل کی نگرانی کے لئے کنٹرول روم قائم کردیئے گئے تھے۔ مقامی افراد کنٹرول روم کے رابطہ نمبر پر شکایات درج کرسکیں گے

Post a Comment

0 Comments